ایرانی بلوچستان کیلئے راہداری۔۔۔ صدیق بلوچ

MUST READ

شرکت مزدوران خارجی سپاه قدس در سرکوب مردم بپاخاسته

شرکت مزدوران خارجی سپاه قدس در سرکوب مردم بپاخاسته

اسکاٹ لینڈ اور بلوچستان – کردگار بلوچ

اسکاٹ لینڈ اور بلوچستان – کردگار بلوچ

گپ و تران گون وائس فار بلوچ میسنگ پرسنزءِ وائس چیرمین واجہ قدیر بلوچءَ

گپ و تران گون وائس فار بلوچ میسنگ پرسنزءِ وائس چیرمین واجہ قدیر بلوچءَ

ترانے ڈاکتر اللہ نذر ءَ 3 جانوری 2016 کُتگ

ترانے ڈاکتر اللہ نذر ءَ 3 جانوری 2016 کُتگ

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران

بلوچستان اِشغالی در چنگال خونینِ غارتگران

مروچی زرینہ مری ءُ مراد مریءَ پرین 3138 روچ انت کہ بیگواہ انت

مروچی زرینہ مری ءُ مراد مریءَ پرین 3138 روچ انت کہ بیگواہ انت

جنگی مجرم مشرف ءِ رسوایی

جنگی مجرم مشرف ءِ رسوایی

جئے سندھ متحدہ محاذ کے کارکن شهید سرویچ پیرزادہ کے والد لطف علی سے گفتگو

جئے سندھ متحدہ محاذ کے کارکن شهید سرویچ پیرزادہ کے والد لطف علی سے گفتگو

آوارجتگیں بلوچستان ءِ نگیگیں جاوراں ماں گوستگیں سال

آوارجتگیں بلوچستان ءِ نگیگیں جاوراں ماں گوستگیں سال

سویڈش پارلیمنٹءَ واجہ حیر بیار مريءِ بلوچستانءً انسانی حقانی لگتماليءِ پدر کنگءِ تران

سویڈش پارلیمنٹءَ واجہ حیر بیار مريءِ بلوچستانءً انسانی حقانی لگتماليءِ پدر کنگءِ تران

هم اور نوید بلوچ جیسے هزاروں بلوچ خود پاکستانی ریاستی دهشتگری کا شکار هیں – وحید بلوچ برلن جرمنی

هم اور نوید بلوچ جیسے هزاروں بلوچ خود پاکستانی ریاستی دهشتگری کا شکار هیں – وحید بلوچ برلن جرمنی

بلوچ کمانڈر کیساتھ انٹرویو: بلوچستان میں چین کی موجودگی بھارت کو غیر مستحکم کرے گا انٹرویو: وکی ننجپّا

بلوچ کمانڈر کیساتھ انٹرویو: بلوچستان میں چین کی موجودگی بھارت کو غیر مستحکم کرے گا انٹرویو: وکی ننجپّا

بلوچستان میں پاکستان انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں کررها هے ۔ بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج

بلوچستان میں پاکستان انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں کررها هے ۔ بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج

فری بلوچستان موومنٹ مہم ,تمام آزادی پسند شرکت کرسکتے ہیں :حیربیار مری

فری بلوچستان موومنٹ مہم ,تمام آزادی پسند شرکت کرسکتے ہیں :حیربیار مری

پِگــری گُلامـــی – دومی بهر

پِگــری گُلامـــی – دومی بهر

ایرانی بلوچستان کیلئے راہداری۔۔۔ صدیق بلوچ

2020-03-31 15:40:13
Share on

مارچ 25, 2014

انگریز بہادر نے بلوچستان کو سیاسی اور سیکورٹی وجوہات کی بناء پر تقسیم کیا ۔ اس طرح قبائلی ‘ سب قبائل اور یہاں تک خاندان بھی تقسیم ہوئے ۔ لوگ سرحد کے اس پار رہتے ہیں مگر ان کی خاندانی زمین ایران میں واقع ہے ۔ گزشتہ ادوار میں لوگوں کے آمد ورفت پر اتنی پابندیاں نہیں تھیں ۔ حالیہ سالوں میں دونوں ممالک ایران اور پاکستان نے سفر پر پابندیاں عائد کیں ۔ سب سے بڑا مسئلہ ’’ بلوچ تنازعہ ‘‘ ہے ۔ دونوں ممالک کی پالیسی اور خیالات میں یکسانیت پائی جاتی ہے کہ سرحدی علاقوں کے لوگوں پر زیادہ سے زیادہ سختی کی جائے ان خاندانوں کی آمد ورفت کو ممکنہ حد تک محدود کیاجائے ۔ منقسم خاندانوں کو سہولیات فراہم نہ کی جائیں۔چنانچہ راہداری کے نظام کی اہمیت کو کم سے کم تر کیاجائے ۔ 1956ء میں دونوں ملکوں کے درمیان معاہدہ ہوا تھا کہ سرحدی علاقوں کے لوگوں ‘ خصوصاً منقسم خاندانوں کو سفر کی سہولیات فراہم کی جائیں اس کے لئے مقامی انتظامیہ کو یہ اختیار دیا گیا کہ وہ سرحدی علاقوں کے رہنے والوں کو راہداری یا (ریڈ پاس ) جاری کرے ۔ پہلے یہ اختیارات تحصیل داروں کی حد تک افسران کو حاصل تھے۔ ایران کی شکایات کے بعد راہداری کو صرف اور صرف ڈپٹی کمشنر تک محدود کردیا گیا ۔ اس طرح سے 1956کے دو طرفہ معاہدے کی خلاف ورزی کی گئی ۔ سرحدی علاقے کے لوگوں کو سینکڑوں میل سفر کرکے ضلعی ہیڈ کوارٹرز آنا پڑتا ہے اور کئی دنوں بعد ان کو راہداری دی جاتی ہے پہلے تحصیل دار اور ناظم کے دفتر جو نزدیک ترین حکومتی دفتر ہوتا ہے لوگ آسانی سے راہداری حاصل کر لیتے تھے۔ حالیہ اطلاعات کے مطابق ایرانی حکام نے ان خاندانوں کو ایران میں داخل ہونے سے روک دیاہے حالانکہ ان کے ہر قانونی سفری دستاویزات موجود تھیں یہ راہداری ضلع کے سربراہ ڈپٹی کمشنر اور ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ نے جاری کئے تھے۔ ان لوگوں نے اعتراض کیا کہ وہ بلوچ ہیں اور ان سے امتیازی سلوک روا رکھا جارہا ہے ۔ ان کو اپنے خاندان کے افراد سے ملنے نہیں دیا جارہا ہے ۔ اس احتجاج کے باوجود خاندانوں کو ایران میں داخل نہیں ہونے دیا گیا اس امتیازی سلوک پر خاندان کے احتجاج کا کوئی اثر نہیں ہو ا۔اس قسم کے واقعات کو روکنے کیلئے رائے عامہ ہموار کرنا ضروری ہے ۔ حکومت کو چائیے کہ وہ اس امتیازی سلوک پر حکومت ایران سے بھرپور احتجاج کرے ۔ ایران کے سفیر کو وزارت خارجہ میں طلب کرے ان سے اس سلوک کی وضاحت طلب کی جائے ۔ حکومت پاکستان کی جانب سے جاری کردہ راہداری کو تسلیم نہیں کرنا دوطرفہ معاہدے کے خلاف ورزی ہے ۔دوسری جانب حکومت ایران کو چائیے کہ وہ ان سرکاری افسران کی سرزنش کرے جنہوں نے بلوچ خاندانوں کے ساتھ امتیازی سلوک روا رکھا ہے ایران کے سرحد پر صرف اور صرف بلوچ رہتے ہیں ایرانی حکومت کو چاہیئے کہ وہ بلوچوں کے ساتھ اپنے تعلقات کو برادرانہ ‘ دوستانہ رکھے تاکہ ان کو کسی قسم کی غلط فہمی نہ ہو اور نہ ہی ایرانی بلوچوں کے حقوق خصوصاً انسانی حقوق پامال نہ ہوں ۔

Share on
Previous article

مارچ1948 ؁ کا قضیہ . کردگار بلوچ

NEXT article

بلوچستان کی آذادی کے علاوہ کسی اور نقطے پر پاکستان سے کسی قسم کے مزاکرات نہیں ہوسکتے۔ نوابزادہ حیر بیار مری

LEAVE A REPLY