IVBMP -لاپتہ بلوچ اسیران کو جعلی مقابلوں میں شہید کرکے شدت پسند قرار دینا تشوشناک امر ہے

MUST READ

مغربی بلوچستان کے ساتھ ساتھ مشرقی بلوچستان میں بھی ایرانی فورسز پاکستانی فورسز اور خفیہ اداروں کے ساتھ مل کر بلوچ فرزندوں کو اغواہ اور شہید کر رہی ہیں بی ایس او آزاد

مغربی بلوچستان کے ساتھ ساتھ مشرقی بلوچستان میں بھی ایرانی فورسز پاکستانی فورسز اور خفیہ اداروں کے ساتھ مل کر بلوچ فرزندوں کو اغواہ اور شہید کر رہی ہیں بی ایس او آزاد

تمام آزادی پسند بلوچ 5 اگست کو برلن کے احتجاجی مظاہرے میں شرکت کریں : حیربیار مری

تمام آزادی پسند بلوچ 5 اگست کو برلن کے احتجاجی مظاہرے میں شرکت کریں : حیربیار مری

بلوچستان میں خواتین کی جبری گمشدگی وہلاکت افسوسناک و قابلِ مذمت ہیں:بی ایچ آر او

بلوچستان میں خواتین کی جبری گمشدگی وہلاکت افسوسناک و قابلِ مذمت ہیں:بی ایچ آر او

بلوچی زبانءِ شاعرءُ قلمکار هدامرزی واجه عبدالرحمان پهوالءِ شعرے اوغانستانءَ طالبانی حکومتءِ دورءَ

بلوچی زبانءِ شاعرءُ قلمکار هدامرزی واجه عبدالرحمان پهوالءِ شعرے اوغانستانءَ طالبانی حکومتءِ دورءَ

بولانءَ پاکستانی فوجءِ آپریشن انگت برجم انت – ریڈیو حال

بولانءَ پاکستانی فوجءِ آپریشن انگت برجم انت – ریڈیو حال

شهید حیات بیوسءِ شعرے آئی وتی توارءَ

شهید حیات بیوسءِ شعرے آئی وتی توارءَ

بلوچستــــان گلزميـــن اجـــدادی ماســـت

بلوچستــــان گلزميـــن اجـــدادی ماســـت

هم اور نوید بلوچ جیسے هزاروں بلوچ خود پاکستانی ریاستی دهشتگری کا شکار هیں – وحید بلوچ برلن جرمنی

هم اور نوید بلوچ جیسے هزاروں بلوچ خود پاکستانی ریاستی دهشتگری کا شکار هیں – وحید بلوچ برلن جرمنی

طرح تقسيـم بلوچستـان محکوم به شکست است

طرح تقسيـم بلوچستـان محکوم به شکست است

مشکے میں فوجی آپریشن

مشکے میں فوجی آپریشن

گوانک خضدارءِ ھندی حالکار شھید فرید دلاوری (ملوّک جان)ءِ شهادتءِ دومّی سالروچءَ گوانگءِ ٹیم آئيءِ جُھدا پا بلوچستانءِ آجوئی کاروانءَ ستا دنت

گوانک خضدارءِ ھندی حالکار شھید فرید دلاوری (ملوّک جان)ءِ شهادتءِ دومّی سالروچءَ گوانگءِ ٹیم آئيءِ جُھدا پا بلوچستانءِ آجوئی کاروانءَ ستا دنت

بلوچستان سمینار اسٹوکھولم سویڈنءَ پروفیسر ڈاکٹر مصطفےءِ تران

بلوچستان سمینار اسٹوکھولم سویڈنءَ پروفیسر ڈاکٹر مصطفےءِ تران

پاکستان دہشت گردی وسیاسی مفادات کے لیے مذہب کا استعمال کرکے مسلمانوں پہ ظلم کررہا ہے: حیر بیار مری

پاکستان دہشت گردی وسیاسی مفادات کے لیے مذہب کا استعمال کرکے مسلمانوں پہ ظلم کررہا ہے: حیر بیار مری

اعدام امیر دوست محمد خان بارکزائی و سر نوشت بلوچستان

اعدام امیر دوست محمد خان بارکزائی و سر نوشت بلوچستان

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون پروفیسرصبوربلوچءَ

بیست ءُ یک فروری ماتی زبانانی میان اُستمانی روچءِ بابتءَ گپ وترانے گون پروفیسرصبوربلوچءَ

IVBMP -لاپتہ بلوچ اسیران کو جعلی مقابلوں میں شہید کرکے شدت پسند قرار دینا تشوشناک امر ہے

2020-03-27 06:55:02
Share on

 

بلوچ لاپتہ افراد کی بازیابی کیلئے عالمی سطح پر کوشش کرنے والی تنظیم  انٹرنیشنل وائس فار بلوچ میسنگ پرسن نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ گذشتہ دنوں پاکستانی خفیہ اداروں کی جانب سے گیبن آپریشن کے دوران ماسٹر اصغر بلوچ ولد داد محمد اور یحیٰ ولد فضل حیدر کی طرح مزید بلوچ اسیران کی لاشیں گرانے کا خدشہ ہے یاد رہے اس سے پہلے پچھلے ہفتے بلوچستان کے علاقے گوربرات میں بھی چھ لاپتہ بلوچوں کی لاشیں پھینک کر اسے مقابلہ ظاھر کیا گیا تھا ۔ گذشتہ دن گیبن کیچ میں دوران آپریشن پاکستانی فورسز نے 13 سے زائد نامعلوم لاشیں پھینک کر انہیں میڈیا میں بلوچ سرمچار ظاھر کرکے دعویٰ کیا تھا کہ انہیں دورانِ مقابلہ شہید کیا گیا بعد ازاں ان لاشوں میں سے ایک کی شناخت 2 سال سے لاپتہ یحیٰ ولد فضل حیدر کے نام سے ہوئ تھی اور بعد میں ایک اور بلوچ اسیر فرزند کی شناخت ماسٹر اصغر بلوچ ولد داد محمد کے نام سے هوئی ہے ماسٹر اصغر بلوچ ولد داد محمد یکم جنوری 2014 کو تربت سے کلاؤ آتے ہوئے گوکدان میں ایف سی کے ہاتھوں اغوا ہوا اس بات کی گواہی وه تمام لوگ دیتے هیں جو اسی گاڑی میں ماسٹر اصغر بلوچ کیساتھ سفر کررهے تهے. ماسٹر اصغر بلوچ ولد داد محمد تب سے پاکستانی خفیہ اداروں کی تحویل میں تھا ۔ اس کے رہائی کیلئے انکا اہلخانہ ایک بار تربت میں احتجاج کرچکی ہے۔
اس سے پہلے ایک لاش کی شناخت ناصر آباد کیچ کے رهائشی یحیٰ بلوچ ولد فضل حیدر کے نام سے هوئی تھی جسے 22 جنوری 2014 کو گوادر زیرو پوائنٹ کے چیک پوسٹ سےچشم دید گواهوں کے سامنے ایف سی نے اغواه کیا تھا، جسے آج جعلی آپریشن کے نام پر گیبن میں قتل کرکے انکی لاش سول ہسپتال تربت پہنچا دی گئی تھی ، یحیٰ بلوچ ولد فضل حیدر کا نام  انٹرنیشنل وائس فار بلوچ میسنگ پرسن کے مسنگ پرسنز کے لسٹ میں موجود ہے اور اسکی گمشدگی کی رپورٹ اقوام متحده میں درج کی گئی هے
بلوچستان میں نام نہاد قوم پرستوں کی حکومت آنے کے بلوچ اسیران کو رہا کرنے کے بجائے مزید شدت کے ساتھ اغواء کرنا شروع کردیا گیا، اب ایک نئی حکمت عملی کے تحت انکو شہید کرکے انکی لاشیں گرائی جارهی هیں۔ کل کے گیبن کیچ کے آپریشن سے یہ تاثر ملتا ہے کہ آنے والے دنوں میں پاکستانی خفیہ ادارے اپنے جرائم کو چهپانے کے لئے مزیز لاشیں گرائینگے. یحیٰ ولد فضل حیدر کی بازیابی کے بارے میں اقوام متحده کی ورکنگ گروپ مسنگ پرسنز نے پاکستانی حکام کو نوٹس بهیج دی مگر پاکستان نے اسکی گمشدگی کے بارے میں لاتعلقی کا اظہار کیا تھا۔ اسی طرح کلاؤ کے رهائشی ماسٹر اصغر بلوچ ولد داد محمد کا نام بهی  انٹرنیشنل وائس فار بلوچ میسنگ پرسن کے مسنگ پرسنز کے لسٹ میں درج هے۔
گیبن کیچ کے آپریشن کے دوران پھینکی گئ لاشوں میں سے مزید دو افراد کی شناخت ہوگئ ہے ، جن میں سے ایک کا نام دین محمد بگٹی اور دوسرے کا رسول جان بتایا جارہا ہے ، رسول جان تربت میں ایک پرائیوٹ سینٹر ڈیلٹا ٹیچنگ سینٹر میں بطور استاد خدمات سرانجام درے رہے تھے انہیں 7 جنوری 2014 کو تربت سے پاکستانی خفیہ اداروں نے اغواء کیا تھا اس سے پہلے دو لاشوں کی شناخت ہوچکی ہے ، یاد رہے گذشتہ دنوں گیبن میں ہونے والے آپریشن کے دوران پاکستانی فورسز نے پانچ لاشیں پھینک کر انہیں شدت پسند قرار دیا تھا بعد از شناخت معلوم ہوا تھا کہ فورسز نے لاپتہ بلوچوں کو شہید کرکے ان کی لاشیں وہاں پھینک دی تھی ، جن میں سے ابتک چار کی شناخت ہوچکی ہے اسی آپریشن کے دوران پاکستانی فورسز نے حیات بیوس ولد شھسوار جو چلنے پھرنے تک سے معذوری کی وجہ سے قاصر تھے کو انکے گھر میں گولی مار کر شھید کیا تھا ۔

Share on
Previous article

بلوچ نسل کشی میں تیزی لائی گئی ہے ، خلیل بلوچ

NEXT article

مکران آپریشنوں کے پیچھے اصل محرک پاکستان وچین معاہدات ہیں،حیر بیار مری

LEAVE A REPLY